ذہنی بیماریاں

میں جانتا تھا کہ مجھے اپنی زندگی کو تبدیل کرنا پڑے گا۔ مگر نشہ ایک بہت مشکل چیز ہے۔ میرے خیال سے میں تین ہفتوں میں پلٹ آیا تھا۔ اور ایک مہینے کے اندر تمام صورتِ حال ویسی ہی ہوگئی تھی جیسا کہ پہلے تھی۔ اس صورتِ حال نے مجھے بہت پریشان کردیا تھا۔ یہ وقت تھا جب مجھے پتہ تھا کہ مدد لی جائے یا پھر موت کو گلے لگایا جائے۔
مارشل میتھرز (ایمینم )، ریپر-


تعارف:

کسی بھی چیز کا عادی ہوجانا انسان کی ذہنی صحت کو متاثر کرتا ہے۔ چاہے وہ نشہ ، مادی چیزوں (مثلاً ادویات یا منشیات) کے غیر مناسب استعمال کا ہو یا پھر انسانی طبیعت اور برتاؤ (جیسے کہ فحش مواد (Porn) اور جوا) کا ہو، آج کل کی دنیا کا بڑھتا ہوا مسئلہ بنتا جارہا ہے۔ نشے کی بیماری لوگوں کی ذہنیت تبدیل کردیتی ہے اور انہیں ذہنی اور جسمانی طور پر نقصان پہنچاتی ہے۔

علامات اور نشانیاں:

ذیل میں کچھ گروہ بیان کیے گئے ہیں جو کہ اس بیماری کی تمام اقسام میں موجود کچھ خاص علامات کو ظاہر کرتے ہیں۔

۱) مختلف چیزوں کا استعمال Substance use)  ): اس میں کسی چیز کا بے جا استعمال شامل ہے اور یہ ایک بنیادی خاصیت ہے۔ یہ انسانی زندگی کے مندرجہ ذیل پہلوؤں پر اثرانداز ہوتی ہے ۔
۔ ذہنی (Cognitive) تبدیلی: زندگی میں خوش اور صحت مند رہنے اور فیصلہ کرنے کی صلاحیت میں کمی
۔ رویئے (behavioural) میں تبدیلی: اپنی ذمہ داریوں کو نظر انداز کرنا ، رشتوں میں مسائل کا سامنا کرنا، اور روزمرہ زندگی میں دشواریوں کا سامنا کرنا
۔ جسمانی (physiological) تبدیلی: چیزوں کو زیادہ مقدار میں استعمال کرنے کی طلب کا بڑھ جانا جب کہ وہ اشیاء موجود نہ ہوں۔

۲) چیزوں کو ترک کردینا :(Substance Withdrawal) اس میں وہ تمام علامات شامل ہیں جو کہ جسم اور دماغ اس وقت ظاہر کرتے ہیں جب کہ وہ ان اشیاء کے استعمال کے عادی ہوجاتے ہیں۔ اس میں طلب کے وہ جذبات شامل ہیں جو کہ جسم میں ان کی مقدار کم ہوجانے کی وجہ سے سامنے آتے ہیں۔
۔ ذہنی (Cognitive) تبدیلی: جس میں مزاج کی تبدیلی جیسا کہ افسردگی اور چڑچڑاپن شامل ہے ۔
۔ رویئے (behavioural) میں تبدیلی: اس میں متبادل جذبات جیسا کہ ذہنی انتشار، بے آرامی اور بے حس ہونا شامل ہیں۔
۔ جسمانی (physiological) تبدیلی: اس کیفیت میں مختلف تبدیلیاں جیسا کہ نیند کے معمولات میں خرابی، بھوک لگنا یا نہ لگنا وغیرہ شامل ہیں۔

۳) چیزوں کا نشہ ہوجانا (Substance intoxication): چاہے انسان حادثاتی طور پر یا پھر اپنی مرضی سے نشے کی لت کا شکار ہوا ہو، اس کیفیت میں مندرجہ ذیل تبدیلیاں واقع ہوتی ہیں:
۔ ذہنی (Cognitive) تبدیلی: کسی چیز پر توجہ دینے کی صلاحیت میں کمی، یادداشت کے مسائل، غنودگی کی کیفیت اور مزاج میں تبدیلیاں۔
۔ رویئے (behavioural) میں تبدیلی: اپنی ذمہ داریوں کو نظر انداز کرنا ، رشتوں میں مسائل کا سامنا کرنا، اور روزمرہ زندگی میں دشواریوں کا سامنا کرنا۔
۔ جسمانی (physiological) تبدیلی: منہ خشک ہونا، دل کی دھڑکن کا بڑھ جانا، بلڈ پریشر میں تبدیلی وغیرہ۔
جب نشے یا لت لگ جانے کی بیماری کی تشخیص کی جائے تو اس بات کا خیال رکھنا انتہائی ضروری ہے کہ ان تمام عناصر کو دھیان میں رکھا جائے جو اس بیماری کی وجہ بنے۔

مختلف مادی چیزوں کی لت لگ جانے کی بیماری (Substance-Related and Addictive Disorders) کی اقسام:

۱) شراب سے متعلق بیماری (Alcohol Related Disorder): 

اس اصطلاح میں وہ تمام بیماریاں شامل ہیں جن میں خرابی کی وجہ شراب ہے۔ شراب سے متعلق بیماری (Alcohol Related Disorder) میں شراب استعمال کرنے کی بیماری،شراب کا نشہ اورشراب نہ ملنے کی صورت میں اسکی طلب ہونا شامل ہے۔

۲) کیفین سے متعلق بیماری (Caffeine Related Disorder) : 

اس اصطلاح میں وہ تمام بیماریاں شامل ہیں جن میں خرابی کی وجہ کیفین ہے۔ کیفین (Caffeine) سے متعلق بیماری ((Caffeine Related Disorder میں کیفین (Caffeine) کا نشہ اور کیفین (Caffeine)نہ ملنے کی صورت میں اسکی طلب ہونا شامل ہے۔

۳) چرس سے متعلق بیماری (Cannabis Related Disorder): 

اس اصطلاح میں وہ تمام بیماریاں شامل ہیں جن میں خرابی کی وجہ چرس ہے۔ چرس سے متعلق بیماری (Cannabis Related Disorder) میں چرس استعمال کرنے کی بیماری، چرس کا نشہ اور چرس نہ ملنے کی صورت میں اسکی طلب ہونا شامل ہے۔

۴) ہیلو سینوجن سے متعلق بیماری ( (Hallucinogen-related disorders:

اس اصطلاح میں وہ تمام بیماریاں شامل ہیں جن میں خرابی کی وجہ ایسی فعال نفسی (psychedelic) منشیات ہیں جو کہ غیر اصل خیالات اوروہم و گمان کی کیفیت پیدا کرتی ہیں۔ اس طرح کی ادویات کی مختلف اقسام میں فنسائکلیڈینphencyclidine (PCP) جسکا مقامی نام ’’اینجل ڈسٹ‘‘ (Angel Dust) ہے، lysergic acid diethylamide (LSD) اور دیگر تمام ہیلوسنوجن (hallucinogen) شامل ہیں۔

ہیلو سینوجن سے متعلق بیماری ((Hallucinogen-related disorders میں سب سے پہلے فنسائکلیڈین phencyclidine کے استعمال کرنے کی بیماری اور اس کا نشہ شامل ہیں۔ اس کے علاوہ اس میں دیگر ہیلوسنوجنز کے استعمال اور نشہ بھی شامل ہیں۔ آخر میں ہیلو سنوجن پرسسٹنگ پرسپشن ڈس آرڈر hallucinogen persisting perception disorder شامل ہے جس میں اس وہم و گمان کی کیفیت کا واقع ہونا شامل ہے جب کہ ہیلو سینوجن (hallucinogen) کا استعمالترک کردیا گیا ہو۔

۵) سانس کے ذریعے اندر لینے والی چیزوں کے متعلق بیماری (Inhalant Related Disorder)

اس اصطلاح میں وہ تمام بیماریاں شامل ہیں جن میں خرابی کی وجہ وہ تمام اشیاء ہیں جو کہ سانس کے ذریعے اندر لی جاسکتی ہیں۔ ان میں پٹرول کی خوشبو کا نشہ اور صمد بونڈ وغیرہ کا نشہ اور دیگر شامل ہیں۔ سانس کے ذریعے اندر لینے والی چیزوں کے متعلق بیماری    (Inhalant Related Disorder) میں انہیلنٹ( Inhalant) استعمال کرنے کی بیماری اور انکا نشہ شامل ہے۔

۶) اوپیوئڈکے استعمال کی بیماری (Opioid Related Disorder) : 

اس اصطلاح میں وہ تمام بیماریاں شامل ہیں جن میں خرابی کی وجہ وہ تمام اشیاء ہیں جو کہ اوپیوئڈ (Opioid)میں شمار ہوتی ہیں ۔ ان منشیات میں ہیروئن اورمورفن وغیرہ شامل ہیں۔ اوپیوئڈ استعمال کرنے کی بیماری (Opioid Related Disorder) میں اس کے نہ ملنے کی صورت میں اسکی طلب ہونا اور انکا نشہ شامل ہے۔

۷) سکون بخش، نیند لانے والی اور تکلیف دور کرنے والی ادویات کا استعمال کرنے کی بیماری Sedative-, hypnotic- or anxiolytic- related disorders)): 

حالانکہ سکون بخش، نیند لانے والی اور تکلیف دور کرنے والی ادویات کے الگ الگ مقاصد ہیں لیکن انہیں ایک ساتھ رکھنے کی وجہ انکے وہ اثرات ہیں جو کہ یہ ایک انسانی زندگی پر مرتب کرتی ہیں جن میں انکا استعمال اور نشہ شامل ہے۔ اس اصطلاح میں وہ تمام بیماریاں شامل ہیں جن میں خرابی کی وجہ وہ تمام اشیاء ہیں جو کہ دواؤں میں شمار ہوتی ہیں۔

ادویات جیسا کہ ویلیم ( (Valium اور زینک (Xanax) وغیرہ کا غلط استعمال اس بیماری اوراسکے نشے کی وجہ بنتا ہے ۔

۸) چُستی پیدا کرنے والے عناصر کا استعمال کرنے کی بیماری (Stimulant Related Disorder) : 

اس اصطلاح میں وہ تمام بیماریاں شامل ہیں جن میں خرابی کی وجہ وہ تمام اشیاء ہیں جو کہ جسم میں چُستی اور توانائی پیدا کردیتی ہیں جن میں کوکین (Cocaine) ، ایمفیٹامنز (amphetamines) (مثلاً ریٹالین (Ritalin) ، ایڈیرال (Adderall)) اوریہاں تک کہ باتھ سالٹ (Bath salt) بھی شامل ہے۔ ڈاکٹر کی ہدایات کے مطابق دی جانے والی ادویات کا غلط استعمال بھی اس زمرے میں عام ہے۔ چُستی پیدا کرنے والے عناصر کا استعمال کرنے کی بیماری (Stimulant Related Disorder) میں سٹیمیولنٹ (Stimulants) استعمال کرنے کی بیماری ، انکا نشہ اور انہیں نہ ملنے کی صورت میں اسکی طلب ہونا شامل ہے۔

۹) تمباکو سے متعلق بیماری (Tobacco Related Disorder): 

تمباکو پر گہرا انحصار کرنے کی وجہ نے اسے دنیا میں سب سے زیادہ استعمال کی جانے والی نشہ آور شے بنادیا ہے۔ یہ آرام سے ہر جگہ دستیاب ہوتا ہے۔ دو اہم بیماریاں اس سے جڑی ہوئی ہیں ۔ تمباکو سے متعلق بیماری (Tobacco Related Disorder) میں اسکا نشہ کرنا اورنہ ملنے کی صورت میں اسکی طلب ہونا شامل ہے۔

اگرچہ، اس حصے میں بیان کی گئی کچھ اشیاء ایسی ہیں جنہیں نوجوان نسل عام طور پر استعمال کرتی ہے، لیکن یہ جاننا ضروری ہے کہ ان میں ایسی کونسی بات ہے جو انہیں ایک بیماری میں تبدیل کردیتی ہے۔ یہ اس وقت ایک خرابی کی شکل اختیار کرلیتا ہے جب کہ کسی چیز کا استعمال ایک مرض میں تبدیل ہوجائے۔مختلف مادی چیزوں کی لت لگ جانے کی بیماری (Substance-Related and Addictive Disorders) نا صرف بڑوں بلکہ نوعمروں خاص طور پر اسکول جانے والے بچوں میں بھی ایک سنگین مسئلے کی شکل اختیار کرتا جارہا ہے۔ اگر آپ پریشانی محسوس کر رہے ہوں اور آپ کو محسوس ہونے لگے کہ کسی چیز کا استعمال یا اسکا عادی ہوجانا آپکی روزمرہ زندگی یا پھر کسی انسان کے لیئے جن سے آپ پیار کرتے ہوں تکلیف کا سبب بن رہی ہے تو ہم سے رابطہ کریں۔ رُو برو۔ آئیے بات کریں



!ہم سے رابطہ کریں ، روح برو - آئیں بات کریں


  تھراپی حاصل کریں  


 ان بیماریوں سے کس طرح نمٹا جا سکتا ہے؟ سائیکو تھراپی کے بارے میں پڑھیں    

  سائیکو تھراپی