خود کو نقصان

خودکشی کیے بغیر خود کو چوٹ پہنچانے سے اجتناب کرنے کے لیئے طویل مدتی منصوبہ بندی

خودکشی کیے بغیر خود کو چوٹ پہنچانے اور اس عمل میں شامل افراد سے متعلق مختلف مفروضے اور خیالات موجود ہیں۔ نان سوسائڈل سیلف انجری (این ایس ایس آئی) خود کو دانستہ طور پر نقصان پہنچانے کے مختلف قسم کے رویوں کو ظاہر کرتا ہے جس میں خود کو کاٹنا، جلانا، زہر لے لینا، مارنا اور دیگرتکلیف دہ طریقوں سے خود کو نقصان پہنچانے والے عمل لوگوں میں عام طور پرپائے جاتے ہیں۔
این ایس ایس آئی کو عام طور پر منفی رویوں پر قابوپانے یا ان سے ابھرنے کی ایک حکمت عملی تصور کیا جاتا ہے جس میں لوگ خود کشی کی نیت کے بغیر اپنے جسم کو نقصان پہنچاتے ہیں ۔
ہر انسان کی مشکلات دوسرے انسان سے مختلف ہیں، لوگ مختلف وجوہات کی بناء پر خود کو نقصان پہنچاتے ہیں لیکن بنیادی طور پر ایسا غصہ کی کیفیت سے اُبھرنے ، خود کو سزا دینے اور منفی جذبات کے اظہار کے لیئے کیا جاتا ہے۔
خودکشی کیے بغیر خود کو چوٹ پہنچانے سے اجتناب کرنے کی منصوبہ بندی کو دو حصوں میں تقسیم کیا جاسکتا ہے۔ طویل مدتی اور قلیل مدتی منصوبہ بندی۔
قلیل مدتی منصو بہ بندی میں عام طور پر اپنی مدد آپ کا فلسفہ شامل ہوتا ہے جو کہ انسان کے اپنے اختیار میں ہیں۔ طویل مدتی منصوبہ بندی میں مختلف عوامل شامل ہیں جن میں تمام تر توجہ انسان کے اندرسے خود کو نقصان پہنچانے کے خیالات کو نکالنے پر مرکوز ہوتی ہے۔ طویل مدتی منصوبہ بندی اکثر ایک منظم اور جامع حکمت عملی کے تحت عمل میں لائی جاتی ہے جس میں مختلف طبی ماہرین شامل ہوتے ہیں۔


اپنے جذبات کو سمجھیں:

جیسے کہ پہلے بیان کیا گیا ہے، خود کو نقصان پہنچانے کی سب سے بڑی وجہ یہ ہے کہ لوگ اپنے پیچیدہ جذبات کو سمجھ نہیں پاتے۔ کیا آپ کو لگتا ہے کہ آپ اپنے جذبات کو پہنچاننے اور انہیں سنبھالنے میں ناکام ہورہے ہیں؟ ایسے جذبات پر قابو پانے کا واحد ذریعہ انہیں سمجھنا ہے۔ اگر یہ جاننے کی کوشش کی جائے کہ ان جذبات کا مرکز کیا ہے؟ کس وجہ سے یہ جذبات پیدا ہورہے ہیں تو ان پر قابو پانا ممکن ہے۔ اگر کوئی شخص اپنے آپ کو مزید نقصان نہیں پہنچانا چاہتا تو اسے غور کرنا چاہیئے کہ پہلی بار اس نے ایسا کرنے کی کوشش کیوں کی تھی؟ اگر وہ اس سوال کا جواب جان جائے تو عین ممکن ہے کہ وہ اپنے ان جذبات کے بارے میں جان سکے جو کہ اسے گاہے بگاہے خود کو نقصان پہنچانے پر اکساتے ہیں اور انہی معلومات کی بناء پر انہیں اپنے زور آورمنفی جذبات پر قابو کرنے میں مدد ملے گی۔


اپنی ذات سے بات کریں:

یہ بات بہت اہم ہے کہ آپ کس طرح خود سے بات کرتے ہیں ۔ اپنی ذات سے بات کرنے کا مطلب وہ خیالات اور سوچ ہے جو ہر وقت آپ کے ذہن میں موجود رہتی ہے۔ اپنی ذات کو نقصان پہنچانے کا ایک بڑا سبب منفی سوچ رکھنا اور اس کو پروان چڑھانا بھی ہے۔ اپنی ذات کو نقصان نہ پہنچانے کے لیئے بہت ضروری ہے کہ سوچنے کا انداز تبدیل کیا جائے۔ یہ تبدیلی وقت طلب ہے کیونکہ اس میں سوچ اور سوچنے کا نظریہ مکمل طور پر تبدیل کرنا ہے اور منفی سوچ کو مکمل طور پر نظر انداز کرنا ہے۔ جو لوگ خود کو نقصان پہنچاتے ہیں وہ اپنی ذات کے لیئے ہمیشہ بہت سخت رہتے ہیں یہی وجہ ہے کہ وہ اپنے غصے پر قابو نہیں رکھ پاتے اور خود کو نقصان پہنچاتے ہیں۔ اس لیئے یہ بہت ضروری ہے کہ وہ اپنی ذات سے متعلق منفی سوچ اور منفی رویہ کو ختم کریں۔



علاج:

تھراپی یا علاج طویل مدتی منصوبہ بندی کا ایک اہم عنصر ہے جو کہ کسی ماہر معالج کے ذریعے انجام دیا جاتا ہے۔ مختلف معالج علاج کے مختلف طریقے اختیار کیے ہوئے ہیں جو کہ اس تمام تر عمل میں بہت اہم ہیں۔ ایسے ہی کچھ طریقوں میں نفسِ حرکی نفسیاتی طریقہ علاج (psychodynamic psychotherapy)، رویہ کی شناخت کے ذریعے علاج ((cognitive behavioral therapy (CBT) ، اور نظریاتی اور منطقی گفتگو کے ذریعے علاج

 ((dialectical behavioral therapy (DBT) شامل ہیں۔ اگر آپ خود کو نْصان پہنچاتے ہیں اور اس کیفیت سے جان چھڑانا چاہتے ہیں تو آپ کو چاہیئے کہ ماہر، نفسیات سے رابطہ کریں اور ان سے اپنے حالات کے متعلق گفتگو کریں۔ آپکے معالج کے ساتھ آپ کی ہر ملاقات آپ کو بہتری کے راستے پر آگے بڑھنے میں مدد دے گی۔

حوالہ جات:

۱) ہمفریز کے ڈی، رزنر ڈبلیو، وکس جے۔ایف، اور میور ایم کی کتاب نان سوسائڈل سیلف انجری سے ماخوذ
https://www.counseling.org/docs/default-source/vistas/article_4486fd25f16116603abcacff0000bee5e7.pdf?sfvrsn=4
۲) پیٹرسن جے، فریڈینتھل ایس، شیلڈن سی اور اینڈرسن آر کی کتاب نان سوسائڈل سیلف انجری ان ایڈولسنس سے ماخوذ
۳) رائل کالج آف سائیکاٹرسٹ کی ویب سائٹ، سیلف ہارم سے حاصل کردہ
https://www.rcpsych.ac.uk/expertadvice/problemsdisorders/self-harm.aspx
۴) سیلف ہارم https://www.nami.org/Learn-More/Mental-Health-Conditions/Related-Conditions/Self-harm سے حاصل کردہ
۵) سیلف ہارم، دی سیکرٹ سیلف http://www.sane.org.uk/uploads/self-harm.pdf سے حاصل کردہ